اکھلیش۔شیوپال میں کم ہوتی تلخیاں،رکنیت منسوخ کرنے کی عرضی واپس

0
19

لکھنؤ:25مارچ(یواین آئی) سماج وادی پارٹی سربراہ اکھلیش یادو اور ان کے چچا و پرگتی شیل سماج پارٹی فاونڈر شیوپال سنگھ یادو کے درمیان گذشتہ کچھ سالوں سے قائم رشتوں کی تلخیوں میں اب نرمی کے اشارے ملنے لگے ہیں۔
سماج وادی پارٹی نے جسونت نگر سے رکن اسمبلی مسٹر شیوپال کی رکنیت ختم کرنے کے ضمن میں اسمبلی اسپیکر کو پارٹی کی جانب سے دی گئی عرضی واپس لے لی ہے۔
چچا۔بھتیجے کے رشتے میں گرماہٹ اور دونوں میں قربت کے آثار ابھی حال میں ہوئے ختم ہوئے ہولی کے تیوہار سے ہی نظر آنے لگے تھے۔جب دونوں نے کنبے کے سربراہ ملائم سنگھ یادو کے ساتھ آبائی شہر سیفئی میں منعقد ہولی ملن تقریب میں ایک ساتھ شرکت کی تھی ۔
گذشتہ سال لوک سبھا انتخابات میں شیوپال سنگھ نے فیروزآباد سیٹ سے پرچہ نامزدگی داخل کیا تھا جہاں سے سماج وادی پارٹی امیدوار کے طور پر ایس پی جنرل سکریٹری پروفیسر رام گوپال یادو کے بیٹے اور شیوپال کے بھتیجے اکشے یادو انتخابی میدان میں تھے۔شیوپال کے اس فیصلے کے بعد سماج وادی پارٹی نے اسمبلی اسپیکر کے سامنے عرضی داخل کر کے شیوپال کی رکنیت منسوخ کرنے کا مطالبہ کیا تھا۔
اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر رام گوند چودھری نے بدھ کو بتایا کہ کچھ تکنیکی وجوہات کی وجہ سے پارٹی نے عرضی واپس لے لی ہے حالانکہ انہوں نے وجہ بتانے سے انکار کردیا۔
قابل ذکر ہے کہ حال ہی میں ختم ہوئے ہولی کے تیوہار میں خاندانی پروگرام کے دوران اکھلیش نے پی ایس پی ایل سربراہ کے پیر چھو کر آشیرواد لیا تھا۔ اس موقع پر حامیوں نے جئے اکھلیش۔جے شیوپالٗکے نعرے لگئے تھے جس سے ایس پی سربراہ کچھ ناراض دکھے تھے اورانہوں نے حامیوں سے نعرے بازی بند کرنے کو کہا تھا۔
ایس پی فانڈر ملائم سنگھ یادو گذشتہ کئی سالوں سے بھائی اور یبٹے کے درمیان صلح۔سمجھوتہ کرانے کی لگاتار کوششیں کرتے رہے ہیں۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here