کینیا میں جرمنی کے 60 لاکھ ماسک غائب

0
14

برلن،25مارچ(یواین آئی)جرمنی کے کسٹم حکام نے کہا ہے کہ طبی عملہ کی حفاظت کے لئے آرڈر کئے گئے 60 لاکھ سے زائد ماسک کینیا ایئرپورٹ سے غائب ہوگئے۔جرمن حکام کے مطابق وہ لاپتہ ہونے والے 60 لاکھ ماسک کی برآمدگی کے لئے تحقیقات کررہے ہیں۔جرمن وزارت دفاع کے ترجمان نے ’ا سپیگل‘ آن لائن میں شائع ہونے والی رپورٹ کی تصدیق کرتے ہوئے کہا ”حکام یہ جاننے کی کوشش کر رہے ہیں کہ کیا ہوا“۔دوسری جانب کینیا کے ہوائی اڈے کی اتھارٹی (کے اے اے) کے ترجمان نے بتایا کہ تحقیقات میں ابھی تک کچھ نہیں ملا ہے۔واضح رہے کہ جرمن کسٹم حکام نے ایف ایف پی 2 ماسک، جو 90 فیصد سے زیادہ ذرات کو فلٹر کرتے ہیں، کے آرڈر کئے تھے۔کسٹم حکام اور مسلح افواج ماسک کی خریداری کے لئے وزارت صحت کی مدد کررہی تھی۔
مذکورہ کھیپ 20 مارچ کو جرمنی کو موصول ہوجانی چاہے تھی لیکن کینیا کے ہوائی اڈے پر گزشتہ ہفتہ کے آخر میں غائب ہوگئی جس کے بارے میں تاحال کوئی سراغ نہیں ملا ہے۔علاوہ ازیں یہ واضح نہیں ہوا ہے کہ ایک جرمن کمپنی کے تیار کردہ ماسک کینیا میں کیوں تھے؟۔جرمن حکام کے ذرائع نے بتایا کہ ”وہاں کیا ہوا، یہ چوری کا معاملہ ہے یا ماسک فراہم کرنے والے غیر سنجیدہ ہیں، سارا معاملہ کسٹم حکام نے کلیئر کردیا“۔’اسپیگل‘ آن لائن کی رپورٹ کے مطابق کہ جرمنی نے کورونا وائرس سے مقابلہ کرنے کے لئے حفاظتی اور سینیٹری ساز وسامان کے لیے 26 کروڑ ڈالر کے آرڈرز کئے۔وزارت دفاع کے ترجمان نے کہا کہ ماسک کے غائب ہونے سے کوئی مالی اثر نہیں پڑا کیونکہ رقم کی ادائیگی نہیں کی گئی تھی۔خیال رہے کہ جرمنی وائرس سے متاثرہ مریضوں کے لئے اپنے اسپتالوں اور طبی عملے کو تیار کررہا ہے۔رابرٹ کوچ انسٹی ٹیوٹ آف پیناڈمک ڈسیز کے مطابق جرمنی میں تصدیق شدہ کورونا وائرس کے 27 ہزار 436 مریض اور 114 افراد ہلاک ہوچکے ہیں۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here